Paying Fidya on behalf of a deceased – How is it calculated?

Question:

Please can mufti advise as how to go about calculating my late mum’s fidya for possibly missed fast & salaahs with the little information we have at hand.

Mum passed on recently at age 81 without leaving behind a will or any information pertaining to her possibly missed fast & salaah. However she has left behind a little jewelry.

1.What we do know is that she became baliq at age 14 & had a hysterectomy at age 44. So should we pay for 7 fast (missed because of menstruation)X30years?

2.She had 6 pregnancies- should we pay for these i.e. 6 pregnancies X 30 days

 3. As for Salaah- as children we can remember her as being meticulous  & even praying the nafeel salaahs ( ishraaq, chaaste, tawhidjid)

What we don’t know,  however,  is whether she prayed all her salaah in her youth. How do we go about calculating this?

We have asked our aunts but they don’t seem to remember saying that it is possible that she could have missed some salaah .

Please advise.

 

Answer:

In the Name of Allah, the Most Gracious, the Most Merciful.

As-salāmu ‘alaykum wa-rahmatullāhi wa-barakātuh.

We make Duaa that Allah Ta’ala shower His infinite mercy on your mother and grant her the highest stages of Jannah. Ameen

In principle, if a person passes away with outstanding Salaah and fasts, then Fidya will only be paid if the Mayyit made a Wasiyyah (bequest) to pay the Fidya for those missed Salaah and Fasts. The Fidya will be payed from a maximum 1/3 of the estate after settling burial expenses and debts if any.

In this situation, it appears that your mother did not make any Wasiyyah, hence it will not be binding on you to pay the Fidya. However, if from your own wealth you wish to pay for her Fidya, you will be greatly rewarded for that.[i]

If your Mother attained puberty at 14 years and had a hysterectomy at the age of 44, it is possible that she experienced menstruations in 31 Ramadhaan’s. Therefore, if her habit was 7 days a month, you will multiply 7×31 and pay the Fidya accordingly.

You may apply your own discretion and estimate her possible missed Salaah and Fasts during her youth and pregnancies and pay the Fidya as a matter of precaution.

One should keep in mind that for each day, there are 6 Fidyas; the 5 Fardh Salaahs and Witr.

And Allah Ta’āla Knows Best

Checked and Approved by,

Mufti Ebrahim Desai


[i] الدر المختار وحاشية ابن عابدين (رد المحتار) (2/ 424)

(وَفَدَى) لُزُومًا (عَنْهُ) أَيْ عَنْ الْمَيِّتِ (وَلِيُّهُ) الَّذِي يَتَصَرَّفُ فِي مَالِهِ (كَالْفِطْرَةِ) قَدْرًا… (بِوَصِيَّتِهِ مِنْ الثُّلُثِ) مُتَعَلِّقٌ بِفَدَى وَهَذَا لَوْ لَهُ وَارِثٌ وَإِلَّا فَمِنْ الْكُلِّ قُهُسْتَانِيٌّ (وَإِنْ) لَمْ يُوصِ وَ (تَبَرَّعَ وَلِيُّهُ بِهِ جَازَ) إنْ شَاءَ اللَّهُ وَيَكُونُ الثَّوَابُ لِلْوَلِيِّ اخْتِيَارٌ

قوله:(قَوْلُهُ وَيَكُونُ الثَّوَابُ لِلْوَلِيِّ اخْتِيَارٌ) أَقُولُ: الَّذِي رَأَيْته فِي الِاخْتِيَارِ هَكَذَا وَإِنْ لَمْ يُوصِ لَا يَجِبُ عَلَى الْوَرَثَةِ الْإِطْعَامُ لِأَنَّهَا عِبَادَةٌ فَلَا تُؤَدَّى إلَّا بِأَمْرِهِ إنْ فَعَلُوا ذَلِكَ جَازَ وَيَكُونُ لَهُ ثَوَابٌ. اهـ.

وَلَا شُبْهَةَ فِي أَنَّ الضَّمِيرَ فِي لَهُ لِلْمَيِّتِ وَهَذَا هُوَ الظَّاهِرُ لِأَنَّ الْوَصِيَّ إنَّمَا تَصَدَّقَ عَنْ الْمَيِّتِ لَا عَنْ نَفْسِهِ فَيَكُونُ الثَّوَابُ لِلْمَيِّتِ لِمَا صَرَّحَ بِهِ فِي الْهِدَايَةِ مِنْ أَنَّ لِلْإِنْسَانِ أَنْ يَجْعَلَ ثَوَابَ عَمَلِهِ لِغَيْرِهِ صَلَاةً أَوْ صَوْمًا أَوْ صَدَقَةً أَوْ غَيْرَهَا كَمَا سَيَأْتِي فِي بَابِ الْحَجِّ عَنْ الْغَيْرِ

الفتاوى الهندية (1/ 207)

وَلَوْ فَاتَ صَوْمُ رَمَضَانَ بِعُذْرِ الْمَرَضِ أَوْ السَّفَرِ وَاسْتَدَامَ الْمَرَضُ وَالسَّفَرُ حَتَّى مَاتَ لَا قَضَاءَ عَلَيْهِ لَكِنَّهُ إنْ أَوْصَى بِأَنْ يُطْعَمَ عَنْهُ صَحَّتْ وَصِيَّتُهُ، وَإِنْ لَمْ تَجِبْ عَلَيْهِ وَيُطْعَمُ عَنْهُ مِنْ ثُلُثِ مَالِهِ فَإِنْ بَرِئَ الْمَرِيضُ أَوْ قَدِمَ الْمُسَافِرُ، وَأَدْرَكَ مِنْ الْوَقْتِ بِقَدْرِ مَا فَاتَهُ فَيَلْزَمُهُ قَضَاءُ جَمِيعِ مَا أَدْرَكَ فَإِنْ لَمْ يَصُمْ حَتَّى أَدْرَكَهُ الْمَوْتُ فَعَلَيْهِ أَنْ يُوصِيَ بِالْفِدْيَةِ كَذَا فِي الْبَدَائِعِ وَيُطْعِمُ عَنْهُ وَلِيُّهُ لِكُلِّ يَوْمٍ مِسْكِينًا نِصْفَ صَاعٍ مِنْ بُرٍّ أَوْ صَاعًا مِنْ تَمْرٍ أَوْ صَاعًا مِنْ شَعِيرٍ كَذَا فِي الْهِدَايَةِ. فَإِنْ لَمْ يُوصِ وَتَبَرَّعَ عَنْهُ الْوَرَثَةُ جَازَ، وَلَا يَلْزَمُهُمْ مِنْ غَيْرِ إيصَاءٍ كَذَا فِي فَتَاوَى قَاضِي خَانْ. وَلَا يَصُومُ عَنْهُ الْوَلِيُّ كَذَا فِي التَّبْيِينِ.

البناية شرح الهداية (4/ 85)

[حكم من مات وعليه قضاء رمضان فأوصى به]

م: (ومن مات وعليه قضاء رمضان فأوصى به) ش: معناه قرب من الموت فأوصى [بقضاء] رمضان، لأن الإيصاء بعد الموت لا يتصور م: (أطعم عنه وليه لكل مسكينا نصف صاع من بر أو صاعا من تمر أو شعير) ش: روى كذلك سليمان التيمي عن عمر بن الخطاب وابن عباس – رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُمْ – م: (لأنه عجز عن الأداء في آخر عمره فصار كالشيخ الفاني) ش: في جواز الفدية عنه بسبب العجز الكامل.

م: (ثم لا بد من الإيصاء عندنا) ش: يعني إذا أوصى يلزم الإطعام عنه على الولي من ثلث ماله وبه قال مالك فيجزئه إن شاء الله، وإن لم يوص لا يلزم على الولي الإطعام، ومع هذا لو أطعم جاز إن شاء الله.

 آپ کے مسائل اور ان کا حل 4/300

ج… مرحوم کی طرف سے فدیہ کے چند مسائل ذکر کرتا ہوں، تمام مسلمانوں کو ان مسائل کا علم ہونا چاہئے۔

اوّل:… جو شخص ایسی حالت میں مرے کہ اس کے ذمہ روزے ہوں یا نمازیں ہوں، اس پر فرض ہے کہ وصیت کرکے مرے کہ اس کی نمازوں کا اور روزوں کا فدیہ ادا کردیا جائے، اگر اس نے وصیت نہیں کی تو گناہگار ہوگا۔

دوم:… اگر میّت نے فدیہ ادا کرنے کی وصیت کی ہو تو میّت کے وارثوں پر فرض ہوگا کہ مرحوم کی تجہیز و تکفین اور ادائے قرضہ جات کے بعد اس کی جتنی جائیداد باقی رہی، اس کی تہائی میں سے اس کی وصیت کے مطابق اس کی نمازوں اور روزوں کا فدیہ ادا کریں۔

سوم:… اگر مرحوم نے وصیت نہیں کی یا اس نے مال نہیں چھوڑا، لیکن وارث اپنی طرف سے مرحوم کی نماز، روزوں کا فدیہ ادا کرتا ہے تو اللہ تعالیٰ کی رحمت سے توقع ہے کہ یہ فدیہ قبول کرلیا جائے گا۔

چہارم:… ایک روزے کا فدیہ صدقہٴ فطر کے برابر ہے، یعنی تقریباً پونے دو کلو غلہ، پس ایک رمضان کے تیس روزوں کا فدیہ ساڑھے باون کلو ہوا، اور تین رمضانوں کے نوّے روزوں کا فدیہ ۵․۱۵۷ کلو غلہ ہوا، اسی کے مطابق مزید حساب کرلیا جائے۔

اسی طرح ہر نماز کا فدیہ بھی صدقہٴ فطر کے مطابق ہے، اور وتر سمیت دن رات کی چھ نمازیں ہیں (پانچ فرض اور ایک واجب)، پس ایک دن کی نمازوں کا فدیہ ساڑھے دس کلو ہوا، اور ایک مہینے کی نمازوں کا فدیہ ۳۱۵ کلو ہوا، اور ایک سال کی نمازوں کا فدیہ ۳۷۸۰ کلو ہوا۔ مرحوم کے ذمہ جتنی نمازیں اور جتنے روزے رہتے ہیں، اسی حساب سے ان کا فدیہ ادا کیا جائے۔

كتاب النوازل 4/550

الجواب وباللّٰہ التوفیق:اگر میت نے وصیت نہ کی ہو اور سب وارثین فدیہ دینے پر راضی ہوں تو میت کے ترکہ سے فدیہ دینا درست ہے اسی طرح اگر کوئی وارث اپنی طرف سے اپنے ذاتی مال سے فدیہ دینا چاہے تو اس میں بھی کوئی حرج نہیں، لیکن اگر وارثین فدیہ دینے پر راضی نہ ہوں تو ان پر جبر نہیں کیا جاسکتا ہے، اور یہ فدیہ کی رقم غریبوں پر خرچ کی جائے گی خواہ وہ کسی طبقہ سے تعلق رکھتے ہوں

Leave Yours +

No Comments

Leave a Reply

* Required Fields.
Your email will not be published.